Follow me on Twitter

Sunday, September 2, 2012

Peer-e-Kamil: An Urdu Novel with Hate Speech

Someone on twitter informed me that apparently there is an Urdu novel written by Umaira Ahmad in which the story revolves around the conversion of the main character from Ahmadiyya “faith” to Islam.



Title of Peer-e-Kamil, a novel by Umaira Ahmad


So I searched the internet and found the book called “Peer-e-Kamil” (The perfect teacher). After going through the ordeal of reading it, I regret to inform you that it is rubbish!

OK, the review is over.

But keep reading...

Below I write a brief synopsis of the religious content of the novel. It will show how bigoted, dishonest and unprofessional Ms. Ahmad has been while producing this garbage. And yes, even such an exalted title to the book cannot change this fact.

Story: Imama is an Ahmadi girl studying in a medical college. She abandons her wrong faith to become Muslim. Finds that there more to life than just being alive; discovers the love of Holy Prophet (saw); finds her soul-mate who was a way-ward, tortured, drug-addled genius turned saint. The end.

But first, something about the author; Ms. Ahmad is a young writer. Seemingly middles class , holding a Masters in English literature, with the penchant of writing romance fiction,; the kind common in women’s monthly digests. She has apparently written TV serials and is very popular amongst the female readership of Urdu fiction. And yes, she has taught in a reputable school in Sialkot attended by the progeny of the rich and the influential of Pakistan.

Umaira Ahmad -From her Facebook page

In chapter one, Imama is told by her friend that her family are Ahmadis because they are given wealth and economic progression as a reward from their community. Imama offers no refutation, so it must be true. In this chapter and the rest, I could not find any evidence that the author had made any effort to check if Ahmadis and Ahmadi families in Pakistan think and speak the way her characters do. There are no mentions of the words 'Ahmadiyyat', 'Promised Messiah' and her Ahmadi characters are made to speak the language of the hushed non-ahmadi conversations. The kind you can overhear in the corridors of universities when they discuss their Ahmadi colleagues. The pardah-observing, seemingly religious Ahmadis aren't described as people who can pray five times a day or recite Quran or keep fasts. Something that we are constantly reminded of when our so-called true Muslim characters are mentioned.

In chapter two, in her earliest confrontation with her friends in high school, Imama refers to her faith as Islam, but then also refers to the founder of the Ahmadiyya Muslim Jamaat as a new prophet after the Holy Prophet Muhammad (pbuh). Her parents seem to hold the same belief. After having a heated discussing at school with her ‘Syed’ friends in which she was given a long lecture about the finality of Prophethood and her shady family history Imama goes home with many questions in her mind. Her father confirms that he took money from the community which was earned in overseas missions and through NGOs. He is also considerate enough to share the ‘Qadiani’ conspiracy of overtaking the country one day and returning the favour to the kafirs who declared them kafirs.


Anti-Ahmadi Hate Posters common in all major towns of Pakistan. This novel is conveying the same message; but in a longer version.  


Chapter two bares the real mentality of the author who knows nothing about the Ahmadiyya community. She repeats what is already talked about in the drawing rooms of the social circles she frequents. i.e., they (Qadianis) are rich because they are given wealth by their community, their women are well educated, they are brainwashed and know nothing about their literature etc.

Imama’s character is also subjected to inquisitions in her house where frequent references are made to ‘our prophet’. Also, she purchases a Tafsir of Quran written by some big scholar which when discovered by her family causes a huge stir. Her research clearly proves that the copy of the Quran she has been reading all her life has been amended to fit her religious beliefs. Her faith already in tatters, she debates with her brother and father with such conviction that can only be found in anti-ahmadiyya propaganda. She now believes that ‘their prophet’ was an impostor, who desecrated Islam by his claims of being Jesus re-incarnate. Her ‘firqa’ believed that foul language could be used because one can get angry sometimes.


Ahmadiyya Beliefs


Back at university, she has now made a new friend who belongs to the student wing of a religious outfit. She is invited to their meetings and given a lecture on khatm-e-nabuwwat. This apparently was enough for her complete conversion, and our heroine becomes a bona fide Muslim by reciting the Kalma, as if for the first time in her life.


Truth about the Ahmadi Kalima - Video Courtesy thehumaityrules

Imama’s spiritual transition is not yet over. Imagine her luck when she overhears the moving poetry of a well known ‘naat’ which acquaints her with the ‘ishq’e’Rusool (saw)’ for the first time.

In the next few chapters, the author turns to her bread and butter stuff to fill out some pages. The story line could have been lifted out of any standard (rather sub-standard) TV drama script. Will A marry B while breaking the heart of C; and will their parents agree or disagree etc etc. Although scattered within these pages are the author’s impressions of the evils western culture and the experiences of born-again Muslims which could not have been more superficial and crass. Her hero get educated at Yale and finds high flying jobs as only the privileged imaginary characters can. Such fodder is plenty to make her readership imagine and yearn for the joys of wealth and adventure. But her readers need to feel pious as well, hence the religious zeal of her character grows by each page.

Enter the Sufi-Cleric-Professor; Ms. Ahmed’s Wasif Ali Wasif equivalent. One of those religious mentors who find easy following amongst the guilty-filthy-rich of Lahore and Islamabad. The type right out of a Qurdrutullah Shahab or Zaid Hamid fantasy.

By chapter seven, our author has done justice to the soap-opera stuff. Her Sufi needs to deliver the final blow to her hero to make him understand who the Rahbar-e-Kamil is? His words are standard Sufi material which should work if applied as specified. The soul-mates are still apart, driven by the uncertain paths they have chosen. But they are destined to meet; out of all places in the Holiest of the Holy, the Kaa’ba. Her readers have no way to escape. The sermons, the symbology, the coincidence of their crossing paths- It must be fate!



WARNING: This video may wash your brain (of all misconceptions)

But wait. There is a twist. Ms Ahmed kills the hero, and then brings him back. Our saintly professor becomes the guardian of the converted Muslimah to make sure her dastardly parents do not coerce her back. And then as if by soap-opera miracle, they are joined in holy matrimony. The ex-Qadiani girl is now a true believer and her husband a true Ashiq-e-Rusool as she had unknowingly made him ponder nine years ago.

I feel sorry for the readers of Ms. Ahmed’s work. They are truly reading a piece of cheap literature. But I hear that the book has been translated into English. There is a gap in the market or Islamic romantic fiction in English, so this book should do well also considering the fact that it deals with ‘that firqa’ and their misguided ways.

Now some words for the author. Dear Ms. Ahmed, I belong to the Ahmadiyya Muslim Community, and have for some part of my life inhabited the world you have tried to write about. I can tell you for a FACT that you could not be more wrong. An Ahmadi’s faith revolves around the path of the Rahbar-e-Kamil Muhammad (pbuh). The founder of our community, the Imam Mahdi not only declared himself to be the perfect servant of his exalted Master (pbuh), he also proved it through his own life. A life devoted to the service of Islam and its defense. You obviously have not read any of the thousands of poetic verses he had written in the love of the Holy Prophet (pbuh). I have heard most of the popular naa’ts in Urdu language, from classics to the modern day ‘musical’ numbers, and I can assure you that none can match in devotion, sincerity and total immersive love, a single couplet from the pen of Mirza Ghulam Ahamd (a.s.).

I can also confirm that to be an Ahmadi Muslim, one must sacrifice their wealth, not receive it from the Jamaa’t. Next time you see an Ahmadi (a real one), please ask them to show you their receipts of monthly donations. And while you are at it, also check if they have any literature answering the slanderous pamphlets you have quoted in this book.


Ishtiaq Ahmad- Urdu writer of popular children's fiction and a purveyor of hate speech.


Religion sells in Pakistan, so religious-romance fiction will also sell. Just like Ishtiaq Ahmad’s religious-detective stories for children sell. Just like the charlatan anchors on TV shows, Mullah’s on the streets, Makhdooms and Peers in their shrines and their pet politicians in their offices sell religion; I can see good business sense in this book. But just like all the afore mentioned classes, you are also contributing to the slow, painful death of Pakistan. But in your case, you are also telling poor stories- Do better next time.

43 comments:

  1. So what was wrong about Peer e Kamil....its so true and reality based....

    ReplyDelete
    Replies
    1. As I said in my post, there is nothing real about the story. Its a story based on a fantasy.

      Delete
    2. yeah its so true novel. i met an ahmedi girl who hid her actual fake religion from me and all of my friends and other college mates. her name was aliya tabassum. whence her tutor got investigation and we then knew that she's qadiani, she left meeting us and left contacting us. but before that she was habitually talking to us whether we want to listen to her or not. after knowing her reality she left all of us like a coward.

      Delete
  2. Jazakumallah very well written and explained !

    ReplyDelete
  3. Ah come on....its true...I will come on to this.....but first how can you call an Ahmadi a Muslim...you sure need to be corrected.....no ahmadi is allowed to call him a Muslim
    now coming to the crap you wrote in your article....when you say Muhammad s.a.w is the last prophet...how come you call Mr Mirza Ghulam Muhammad a prophet?....you can call him a saint a sufi anything but not a prophet....if He your so called leader was believer and lover of the Prophet Muhammad s.a.w....why he insisted to be the prophet? I have seen many ahmadi living around me and never saw them donating a single penny....they are becoming more rich every single day......I really dont want to put an argument with you because nothing can convince a non believer.....just cant take it....you calling an ahmadi a Muslim and calling Mirza Ghulam Muhammad a lover and na'at writer....

    ReplyDelete
    Replies
    1. a. Its Ghulam Ahmad, not Ghulam Muhammad.
      b. If being a prophet is somehow an insult to the Holy Prophet (saw) then there are 124,000 of them.
      c. If being a prophet after the Holy Prophet (saw) is blasphemy then Jesus/Eesa (as) is still alive in the heavens. What do you say about that?
      d. Who do you think Ahmadis should donate to? Jamaat Islami, or Jamaat ud Dawah, or some other similar religious organization?
      and finally
      e. You try putting an argument forward. Your true story contains such arguments which brought a supposed unbeliever in the fold of the author's verfied version of Islam.

      Delete
    2. Who cares what his name was.....he was not the Prophet.....and Hazrat Isa a.s will come again as ummati of Muhammad s.a.w.....so he will never call himself a prophet....now coming to your point D....who should they donate....none who needs there Haram money...earned by converting....thoo

      Delete
    3. And yeah as I said before, nothing can satisfy a non believer....you are not Muslim PERIOD...

      Delete
    4. I rest my case. :) thanks for your comments.

      Delete
    5. @Sana , So Hazrat Issa can coem back as Umatti prophet but not anyoen else. How old would he be when he comes back. Is he going to be in a human form? Certainly no human can live that long. Also, let Allah be the judge of who is Muslim or not. Look in what state Pakistan is in right now. If it is not Allah punishment then what is it. If we are imposters and liars then let Allah be the judge and let him make an example out of us.

      Delete
    6. ثنا صاحبہ ہمیں اپ کے فتوی کی کوئی ضرورت نہی ہے ۔۔

      فتوی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کا چلے گا ایرے غیرے کا نہی ۔۔۔۔۔ بہتر ناری اور ایک جنتی ۔۔

      اور انیس سو اکہتر میں آپ سب مل کر فیصلہ کر چکے ہو کہ بہتر کون ہیں اور ایک الگ کون ہے ۔۔۔ جزاک اللہ ۔

      اور مادام بات کہنے سے پہلے اپنے مفتیوں کا فتوی دیکھ لیں ۔۔

      یہ فتوی موجود ہے کہ جو حضرت عیسی علیہ اسلام کو نزول کے وقت نبی نہی مانتا وہ کافر ہے۔

      یاد رہے کہ یہ فتوی احمدی کا نہی ہے بلکہ پاکستان کے رجیسٹر مسلمان کا ہے۔۔

      مسز احمد

      Delete
    7. ہاہا۔جماعت احمدیوں کو پیسے دیتی ہے ۔۔۔واہ جی واہ ۔۔
      ۔ میں اپنا اکاونٹ چیک کرونگی ۔ کہ اس رپلائی کے بعد کہیں سے پیسا نہ اگیا ہو۔۔ہی ہی ہی
      ایسا ہو تو ہمیں تبلیغ کرنے کی کیا ضرورت ہے جی ۔۔ پاکستان غریبوں سے بھرا بڑا ہے ۔۔وہ سب ربوہ کیوں نہی اجاتے پیسہ لینے ۔۔۔ بس پیسہ لے لیا اور احمدی ہوگئے۔
      لوگ تو سو دفعہ احمدی ہوں پیسہ دیکھ کر ۔۔۔۔۔


      جماعت پیسہ دیتی نہی بلکہ لیتی ہے انسانیت کے لیے کاموں کے لیے افریکہ میں اسکول، ہسپتال سب سے زیادہ کس نے بنائے۔جماعت نے ۔۔ اپ کے مولوی نے تو نہی ۔۔۔۔۔
      حماعت جائیداد نہی بانٹتی ۔۔ میں اللہ کے فضل سے چھٹی نسل سے ہوں احمدیوں کی اور آج تک تو نہ ہمارے پاس اور نہ ہی میرے شہر میں ایسا کوئی احمدی ہے جس کو جماعت سے جائیداد ملی ہو۔۔ ہاں مربی جو جامعہ سے پڑھ کر باقاعدہ تبلیغ کرتے ہیں ان کی ماہانہ امدنی ضرور اتھاتی ہے اور یہ ناجائز بات نہی ہے کہ وہ لوگ جو دنیاوی کام کی بجائے دین کو پھیلائیں ان کو ماہانہ آمدنی ضرور دینی چاہیئے۔اور ہر مذہب اپنے مبلغوں کو دیتا ہے ۔۔


      پیسے کا الزام ہم پر اور خود یہ امید کہ حضرت عیسی علیہ السالم آکر مال غنیمت اپ لوگوں کے حوالے کریں ۔۔۔

      Delete
    8. Aslam-o-alikum

      Jizakullam for writing this blog when I started reading this book it gave me headaches. There should be a limit of telling a lie especially when the author claims to research about facts
      Especially when author claims that she don't write on news stories because all the facts are not known to her and then how come she writes on the subject on which she didn't have facts from both sides
      When she herself claims that she is not knowledgeable in the religious knowledge
      It's a book to earn stardom as other writers choose Hindus and christian convert she thought a new idea ahmadi
      There is not a single logic or even a proper debate in it

      Delete
  4. Vey nicely concluded ... The so-called "facts" are narrated in the story with a tone of research and conviction for the awaam who love to get their knowledge about everything life and Islam from such fictitious novellas and magazines; without actually contributing their time towards reading and seeking the message of Allah.

    When this novel was being printed in episodes in a women's urdu digest - Khawateen Digest - some 10 or so years back, I wrote the editor a 10 page letter with excerpts from Hadhrat Maseeh e Mauud's books and poetry telling of his love for our beloved prophet Hadhrat Muhammad SAWW and the way love for him is instilled in our hearts from the day we are born. She completely ignored the letter and dint give even one single voice a place in her letters part of the digest; nothing but praise for the writer obviously.

    What's sad for me is how this story will create even more doubts in the minds of youth who read these novels and who are never the ones to go and actually see what Ahmadis have to say.

    Nevertheless, its Allah's jamaat and we have nothing to fear about. Our minds and hearts are alhamdolillah clear when it comes to our beliefs and our love for the Holy prophet SAWW, unlike Imama and umera obviously.

    ReplyDelete
  5. First be clear what that imposter ghulam Ahmed was, a prophet, jesus, imam mehdi, a pregnant man or just a mad man???? How can a human being be all of these at once..
    Please ponder and donot follow wrong and mad people and put your akhirah at stake.
    As for Umera ji she is a living legend, so does Ishtaq Ahmed. Just go and read Quran and ahadith the correct version and please use your brain..

    ReplyDelete
    Replies
    1. A human being can be many things at once. As hadith states 'لا المھدی الا عیسی بن مریم (ابن ماجہ کتاب الفتن باب شدة الزمان).i.e., Mahdi will be none other than Eesa.

      So we just need to discuss the identity of that Eesa. Is that the same Jesus son of Mary who came and died two thousand years ago? If yes, then why is he being brought back to life?

      Your living legends are liars. Stories are made up tales, fabrications etc. And these guys know their trade. Lets not mix fact and fiction here. Nothing about this book was from first hand research.

      Delete
  6. What about being pregnant, calling himself God, and if doesn't belief in Jesus (essa a.s) then why insist on calling himself promised Messiah????

    ReplyDelete
    Replies
    1. I think you need to read his claims first. Being pregnant? How absurd is that. And a claim to divinity is surely a sign of madness. Ahmadis do not hold such beliefs. Please go and read.

      Delete
    2. آپکے اعتراضات کے جواب لنکس میں موجود ہیں ۔۔ غیر جانبدار ہو کر ضرور سنیئے گا اور پلیز سن کر اپنے تاثرات ضرور بتائیے گا۔۔ انتطار رہے گا۔۔۔ولسلام۔

      حیص اور مریمی نفوس کے اعتراض کا جواب ۔۔
      http://www.youtube.com/watch?v=7W0dVNUxNX8&feature=share&list=PLBAF9E26E65950C83




      کیا احمدی مرزا صاحب کو خدا مانتے ہیں؟ ۔۔۔ نعوذ باللہ
      http://www.youtube.com/watch?v=drAUPJMbehI

      حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم '' نہیں ہے سنی سنائی بات خود دیکھنے کی طرح'' پر عمل کرِیں اور جہاں سے یہ اعتراض لیا گیا ہے اس صحفہ کو خود پڑھیں۔اور جانے کہ کیا یہ حقیقی واقعہ ہے یا کشف ۔۔

      آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث مبارک کے مطابق ایسے اشخاص کہ جو اللہ کے پیارے ہوتے ہیں ، اللہ تعالی انکے ہاتھ، پاوٗں، آنکھیں اور کان بن جاتا ہے۔اگرچہ حدیث شریف میں ایسا استعارہ کے رنگ میں ہونا مذکور نہیں مگر ہم سب اسے استعارہ کے رنگ میں ہی مانتے ہیں۔ کیسی عجیب بات ہے کہ جب یہی مضمون حضرت مسیح موعود علیہ السلام اس وضاحت کے ساتھ بیان فرماتے ہیں کہ آپ نے اپنے وجود کو اللہ کا وجود کشف یعنی لطیف خواب میں محسوس کیا تو مولوی جھٹ اعتراض کر دیتے ہیں۔ دراصل بات یہ ہے کہ یہ مولوی اگر اللہ کے پیارے ہوتے تو ضرور اس کیفیت یا اس سے ملتی جلتی کیفیت سے واقف ہوتے، مگر یہ تو اللہ کے پیار سے بے نصیب ہیں ۔

      مزید تسلی کے لیے
      گلدستہ کرامات صفحہ 138 ضرور دیکھئے


      حضرت عیسی علیہ السلام کی توہین کے الزام کا جواب۔
      http://www.youtube.com/watch?v=6UxKpwOUu7k&feature=share&list=UU4y2d9CqFoM-unyJTwcLniQ

      Delete
  7. جزاک اللہ لطف بھائی میں نے سوچا ہوا تھا کہ ایک پیج بناوں گی جہاں پر ایسے مصنفوں کا ذکر تفسیل سے کروں ۔۔ ماشاءاللہ آپ نے ابتدا کر دی ۔۔ اللہ مبارک کرے۔۔ میں بھی چند پوائنٹز کا اضافہ کرنا چاہوں گی ۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    دوبارہ سے مطالعہ کیجیئے جب جلال پہلی بار سیٹج پر آیا اور امامہ نے اس کو پہلی بار دیکھا ۔۔ اسوقت اس کا دل کس کے لیے ڈھرک رہا تھا۔۔۔۔صرف جلال کے لیے۔ امامہ صرف اور صرف اس کی آواز کے سحر میں گم تھی نعت کے الفاط تو اس کے کان تک آ ہی نہی رہے تھے۔ نا صرف جلال بلکہ اس کے بعد بھی پڑھی جانے والی کوئی نعت اس کا دل نہی ڈھرکا سکی۔۔۔ یہ کیسا عشق رسول ہے؟

    بے شک وسیلہ بنایا جاتا اور اللہ ہی بناتا ہے۔۔ وہ کارساز ہے ۔۔لیکن وسلیوں کا محتاج نہی۔ اور اپنی نفسانی خواہشات کو اس کی طرف سے نازل شدہ وسیلے کا درجہ دینا ہرگز درست نہی ہے ۔ویسلہ کا کام اللہ تک پہنچانا ہوتا ہے اور اس کی اپنی حیثیت کچھ بھی نہی رہتی۔۔

    اچھی آواز کا کیا اس قدر قحط پڑ گیا ہے کہ امامہ صاحبہ اچھی آواز سن کر حالوں بے حال ہوگئیں کیا اس نعت سے بدرجہا اثر انگیز نعتیں خود اس نے کبھی ایم ٹی وی یا جلسوں میں شرکت کے دوران نہیں سنی تھیں۔پاکستان میں رہتے ہوئی کبھی اچھی آواز نہی سنی۔ ۔۔ ایسی غیر مرد سے انسیت کب سےاسلام مِں جائز ہوگئی ۔؟؟؟؟؟
    بات تو عشق رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی تھی نا تو کیوں جلال کی آواز میں اچھی نعت سن کر اس کے جذبات کا رخ اس پاکیزہ اور پابرکت ہستی کی طرف نہ ہوا جس کی تعریف وہ آواز اور زبان کر رہی تھی۔ جلال اچھا نعت خواں تھا اس کو یہی حیثیت دینی چاہیئے تھی بس ۔

    عشق رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہوتا تو وہ الفاظ سے متاثر ہوتی اور اس جذبے میں کشش محسوس کرتی جو شاعر کے دل میں اس نعت کو لکھتے ہوئے اٹھا تھا۔ یا اچھی طرز نعت سن کر اس کا دل پیارے آقا حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے محبت کی موجیں جگاتا۔ اس وقت تو اسے جلال یاد ہی نہی رہنا چاہیئے تھا۔


    امامہ تو صرف اورصرف اس کی آواز کے پیچھے تھی۔ اس سے تنہائی میں ملتی تھی اور ٹیلی فون کرتی تھی۔ ان دونوں نے دوستی کی۔ اور تو اور آپس میں '' نام نہاد پاکیزہ محبت'' کا اقرار بھی کیا۔

    میرا سوال یہ ہے کہ کیا جلال تنہائی میں امامہ کو قرآن کی تلاوت سناتا تھا یا پھر نعت؟

    اگر بات شادی کی تھی تو امامہ کے لیے کیا یہ جائز تھا کہ خود ہی اپنے لیے رشتہ ڈھونڈتی پھرے؟۔اسلام کسی لڑکی کو اجازت نہی دیتا کہ وہ خود ہی اکیلی اپنے رشتے ڈھونڈتی پھرے۔ نکاح کے لیے لڑکی کا ولی ہونا ضروری ہے۔


    صبیحہ جس کے ہاتھ پر کلمہ پڑھ کر اسلام قبول کیا وہ مدد نہی کر سکتی تھی؟ ویسے مسلمان تو اسے صبیحہ کے والد کے ہاتھ پر ہونا چاہیے تھا۔ اسلام کے مشکل ترین دور میں بھی صحابیات رضی اللہ یا ام المومینین رضی اللہ نے کبھی کسی کی بیعت نہی لی اور نہ کبھی تاریخ اسلام میں اس قسم کی بیعت کا ذکر ملتا ہے تو صبیحہ کیسے اس بلند مقام پر پہنچ گئی کہ عورت ہو کر وہ امامہ کو کلمہ پڑھائے۔ مرد عالم کی کمی نہی ہے۔۔
    پھر سوچا جائے تو سوال اٹھتا ہے کہ اسلام میں داخل ہونے کے لیے کلمہ طیبہ پڑھتے ہیں یا کلمہ شہادت ۔

    عمیرہ جی پتا نہی کہاں رہتی ہیں جو انھیں پاکستان میں احمدیوں کی ''طاقت'' کا اندازہ نہی ہے۔ کیا پاکستان میں قانون یا حکومت پاکستان احمدیوں کا ساتھ دیتے ہیں؟؟؟؟؟ جو اسقدر خوفزدہ دکھایا ہے جلال کے والدین کو؟

    ReplyDelete
    Replies

    1. اگر عمیرہ کے کسی ''مرید'' نے جوش میں آ کر کسی احمدی کو ''مسلمان'' بنانا چاہا تو وہ منظر کیسا ہوگا جب اس کو معلوم ہوگا کہ ان الزمات کی کوئی حقیقت ہی نہی ہے جو عمیرہ جی نے بڑے ریسرچ کے دعوے سے لکھے ہیں۔

      تب شاید یہ ناول پڑھنے والوں کو سمجھ میں آئے کہ حدیث۔۔۔ ''نہی ہے سنی سنائی بات خود دیکھنے کی طرح '' ۔۔۔کا مضمون کیا ہے ۔۔
      پھر عمیرہ کی بلاوجہ تعریف کرنے والوں کا شرمندگی سے سر خم ہو جائے کہ یہ فتوی رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا ہے کہ ۔۔ آدمی کے لیے جھوٹا ہونے کے لیے کافی ہے کہ وہ بغیر تحقیق کے بات آگے پھیلائے۔۔۔۔۔


      بقول عمیرہ جی کہ میں کسی اخباری خبر کو یک طرفہ کہانی جان کر اس پر ناول نہی لکھتی مگر انھوں نے ایک پوری جماعت کے افراد کے ٘ذہبی عقائد کو بڑی بے خوفی سے محض شہرت پانے کی غرض سے اپنے یک طرفہ جھوٹے الزمات کی زد میں لے لیا۔


      بوگس ڈائیلاگ جو ایک مبلغ دین چاہے کسی بھی دین کا ہو کبھی بھی پیش نہی کرتا۔ ہاہا۔۔
      امامہ مربی کی بیٹِ اور اسے پتہ ہی نہیں کہ پاکستان میں احمدیوں کو غیر مسلم کہا جاتا ہے ۔۔ ۔۔اتنا شدید ری ایکشن دکھایا ہے امامہ کا کہ ہنسی آتی ہے ۔۔۔امامہ اتنی ہوشیار کہ تھوڑے سے عرصے میں بہتر کی بہتر تفاسیر پڑھ لیں۔مذہب اسلام پر عبور حاصل کرلیا۔۔کیا کہنے بھئی۔۔

      واہ جی واہ کیا روحانیت کا مقام ہے
      ۔

      اچھا ہوتا اگر عمیرہ خود ڈائیلاگ بنانے کی بجائے احمدیوں کی طرف سے اصل جوابات ہی لکھتیں۔ کم از کم ان کے قاری تو خود کو احمدیوں کے سامنے مضبوط تو محسوس کرتے۔

      Delete
    2. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ چند اعتراضات بڑے ڈھرلے سے پیش کیے گئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔

      احمدی نعت نہی پڑھتے-
      احمدی رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا نام پر کوئی کشش کوئی جذبہ محسوس نہی کرتے۔-

      ۔میں اس الزام پر عمیرہ سے یہی کہوں گی کہ اس نے دل کیوں نہی چیر کر دیکھ لیے۔


      احمدیوں نے نعوذ باللہ قرآن کی عربی تحریف کی ہے ۔۔-

      واہ کیا کہنے ۔۔۔ خود آیات کو ناقص و منسوخ ماننے والے ۔ خود قرآن کی غلطیاں نکال کر اغیار کے ہاتھوں کیک پکڑانے والے یہ الزام جماعت پر لگاتے ہیں ۔۔
      اللہ طاقت ور ہے اس نے خود قران کی حفاظت کا ذمہ لیا ہے ۔
      قران کا عربی متن بدلنا اتنا آسان نہی جتنا عمیرہ جی آپ نے سمجھا ہوا ہے۔ کئی احمدی حفاظ و قاریوں کی تلاوت یوٹیوب پر موجود ہے اور ایم ٹی اے پر بھی ہر روز تلاوت ہوتی ہے حوصلہ کرکے خود موازنہ ضرور کیجیئے گا ۔۔ سن کر توبہ کے مضمون پر ضرور غور کیجیئے گا۔

      لعنت اللہ علی الکاذبین



      --حضرت مرزا صاحب کے لیے ''ہمارے نبی'' اور جماعت کے لیے ''ہمارے فرقے'' جیسی اصلاحات احمدی استعمال کرتے ہیں

      یہ ثبوت دینا عمیرہ کے ذمے رہا یا ان کے پڑھنے والوں کے ۔۔۔آن سائیٹ ہو یا لڑیچر ۔۔ کوئی بھی باآسانی خود دیکھ سکتا ہے کہ احمدی ''ہمارے نبی کی اصلاح صرف اور صرف حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے ہی استعمال کرتے ہیں اور احمدیت کے لیے عرف عام میں فرقے کی بجائے ''جماعت '' ہی استعمال ہوتا ہے۔
      اور حضرت مرزا صاحب علیہ کے لیے '' حضرت مسیح موعود علیہ السلام '' استعمال کرتے ہیں.
      ۔۔تمام تصاویر دیکھ لیں یہی لکھا ہوا ہے۔۔



      کیا واقعی احمدی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے بڑھ کر بھی کسی کی ذات کو مقام دیتے ہیں۔

      عمیرہ جی کیا جانیں کہ ان کے علماء حضرت مرزا صاحب علیہ السلام کے اس شعر کا کتنا مذاق بناتے ہیں اور ---کافر کافر کہہ کر تمسخر اڑاتے ہیں ۔

      اس شعر کا ترجمہ درج ہے کہ
      ترجمہ ۔۔ اگر عشق محمد کفر ہے تو خدا کی قسم میں سب بڑا کافر ہوں


      پھر ایک جگہ حضرت مرزا صاحب علیہ السلام لکھتے ہیں ۔۔۔

      وہ ہے میں چیز کیا ہوں بس فیصلہ یہی ہے
      وہ پیشوا ہمارا جس سے ہے نور سارا
      نام اس کا ہے محمد [ص] دلبر میرا یہی ہے


      منصف دل خود سوچ لے اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم اگر عرض کریں تو شکایت ہوگی


      عمیرہ نے کس ڈھرلے سے جھوٹ بول کر ان سب باتوں کو احمدی پس منظر میں لکھا ہے۔

      کیوں نہ ہو جب عمیرہ اپنے ناولز میں جھوٹی بات کو ''حدیث'' کہہ کو جان بوجھ کر پھیلا سکتی ہے تو احمدیت کو بھی اسی قلم سے ''جھوٹا'' بنا ڈالا تو کیا۔

      جی ناول شہر ذات میں صحابہ اکرام رضوان اللہ علیہم کو جوتوں کے بغیر رہنے کا حکم اس نے حضور صلی علیہ وسلم کی پاکیزہ ذات کی طرف منسوب کیا ہے ۔۔ نیٹ ریسرچ کریں تو یہی آتا ہے کہ یہ بات جھوٹی ہے ۔۔ پتا نہی عمیرہ جی کی ریسرچ کہاں پر ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

      لعنت اللہ الکاذبین


      اپنے تیئں جو خود کو مسلم کہا تو کیا
      مسلم بنا کر خود کو دکھاتے تو خوب تھا

      سالار کے والد کا کہنا کہ وہ مر چکا ہے اس سے امامہ مطمئن ہوگئی اور باقی سب کو اطمینان ہوگیا۔ حتی کہ سبط صاحب نے بھی اس کی سہیلی جویریہ سے معلوم نہ کروایا کہ سالار کیسے مرا؟؟؟
      امامہ کے پاس کونسے گواہ تھے کہ نکاح خواں مولوی نے کوئی عدالتی کاغذ دیکھنا ضروری ہی نہی سمجھا یا پھر سچے اور پکے مسلمان عالم صبط علی نے اس کے پہلے نکاح کو جان پوجھ کر مولوی سے چھپا دیا کہ کہیں وہ ثبوت نہ مانگ لے کہ اس کا نکاح واقعی ختم ہوچکا ہے ۔۔ کیا نکاح خوان کو نکاح کے ختم ہونے کا ثبوت نہی دیا جاتا۔ کہ اس لڑکی کا دوسرا نکاح ہے اور یہ قانونی دستاویز جس کی رو سے امامہ اب دوسرے نکاح کیلیے آزاد ہے۔کیوں شروع ہی سے امامہ نے یہ سعادت مندی کو اختیار نہی کیا۔ بجائے جلال کے ساتھ افیئر چلانے کے صبیحہ کو کہتی کہ وہ اس کے لیے کوئی رشتہ ڈھونڈے۔

      صبیحہ کے والد جو کہ دینی رہنما بھی ہیں وہ اس کی سرپرستی کرکے اس کے ولی بن سکتے تھے۔ دین میں اس کی اجازت ہے کہ نو مسلم لڑکی کے لیے دینی عالم ولی بن سکتا ہے۔آخر میں بھی تو اس ''پاکیزہ مشرقی سچی مسلمان'' لڑکی نے سیعدہ اماں جی کو اپنا اختیار دے دیا تھا اور سبط صاحب جیسے ''سچے پکے باعمل مسلمان عالم '' نے اس کا نکاح پر نکاح کرا دیا۔استغفراللہ

      جہاں تک احمدیوں کو مسلمان بنانے کا تعلق ہے تو یہ معاملہ بڑے بڑے غیر احمدی علماء حل نہ کر سکے تو اس ناول نے ایسا کیا تیر مار لیا کہ سو سالہ مسلئہ یک دم حل ہو جائے گا۔ اور تمام احمدی ''مسلمان'' ہوجائیں ۔

      یہ ناول تو اللہ معاف کرے سیدھی سادھی رومینٹک کہانی ہے جس کو زبردستی اسلامی خول چڑھا دیا گیا ہے۔ بجائے زمیدارانہ نظام یا عیسائیت ، ہندو ازم کے عمیرہ نے سوچا کہ چلو نیا ٹچ دینے کے لیے احمدیت کو میڈیم بنایا جائے۔۔

      mrs. ahmad

      Delete
    3. صرف عمیرہ یا اشتیاق احمد ہی نہی بلکہ مظہر کلیم جیسے نقال بھی اپنے ناولوں میں عیسائی اور یہودیوں کے قتل عام پر اکساتے نظر آتے ہیں اور پڑھنے والوں کو یہ باور کرواتے نظر اتے ہیں کہ خون ریزی حق کی تعلیم ہے ۔۔اور اس قتل و غارت کو وطن سے محبت قرار دیتے ہیں۔۔تو دوسری طرف نسیم حجازی جیسے ہیں جو تاریخ کو ''عشیقہ واقعات'' سمجھ کر زیر قلم لاتے ہیں۔۔ تاریخ کو مسخ کرنے والوں میں ان کا بھی بہت بڑا ہاتھ ہے۔
      ۔۔ قرآن کہاں ہے ؟ اسلام کہاں ہے؟ یہ رجیسٹڑ مسلمانوں کی بلا جانے
      وہ اسمبلی جس نے خدائی کا دعوا کیا ---۔یہ مسلمان ۔ وہ مسلمان نہی ---۔ اب کیسی ذلت کا شکار ہے ۔۔دیکھنے والوں کے لیے عبرت کا مقام ہے ۔۔


      مذہب اسلام اتنا سستا بنا لیا ہے ان جیسے مصنفوں نے کہ اب ''عشقیہ کہانیوں''یا ڈراموں سے سے مذہب سیکھنے کے مشورے ملتے ہیں یا دوسری طرف نقال بے جھجھک ہو کر علی الاعلان ''مسلمانیت'' کا شور مچارہے ہیں۔۔ اللہ پاکستان کی حالت پر رحم فرمائے۔آمین





      مسز احمد

      Delete
  8. باطل قیامت میں اشتیاق احمد نے اپنے کردار کو نبی وقت کی حیثیت دی اور تو اور ایک مجرم کو بھی حضرت عیسی علیہ السلام بنا دیا۔استغفراللہ۔ نبی کی سچائی کیسے جانچی جارہی ہے۔ داڑھی چیک کرکے کہ اگر نقلی ہے تو نبی نہی ہے اور اگر اصلی ہے تو دوسرے نبی سے کشتی کرے۔۔۔۔استغفراللہ
    لعنت ایسے توہین رسالت کے مرتکبوں پر۔۔فضولیات و واہیات پن کی اعلی مثال۔۔ ختم نبوت والے توہین رسالت کا کیس کیوں نہی کرتے اس پر اس لیے کہ وہ ان میں سے ہے نا۔۔۔
    خود جائز ناجائز سب برابر۔۔۔ اور احمدی اسلام علیکم یا نماز قرآن پڑھیں تو واجب القتل ٹھہریں ۔۔

    واپس آتے ہیں عمیرہ جی کی طرف۔عمیرہ جی صرف پیر کامل ہی نہی اپنے دوسرے ناولز بھی دیکھئے آپ کی فلسفیانہ باتیں اور ذاتی خیال جذباتی پڑھنے والوں کو کشش ضرور دلاتی ہیں مگر ان کو نہی جو دینی علم کا شوق رکھتے ہیں ۔

    سالار کے کردار کو زیر غور لائیں ۔۔
    وہ پڑھتا نہی ہے کم از کم ناول سے ظاہر نہی ہے کہ وہ اپنا وقت پڑھنے میں نہی لگاتا لیکن سب سے بہترین شاگرد ہے۔امتحان میں پورے نمبر لا رہا ہے۔ کلاس میں دھیان نہی دیتا۔استاذہ کی عزت نہی کرتا لیکن اسکول کا ہیڈ بوائے ہے۔۔ڈرائنگ اتنی اعلی کہ ایک تجربہ کار ٹیچر سے بھی بڑھ گیا جو ڈیاگرام اںھوں نے دس منٹ میں بنائی وہ اس نے دو منٹ میں بنا دی۔ کیسے؟۔آرٹ کورس کہاں سے لے رہا ہے پتا نہی۔ وہ کسی گیم کلب نہی جاتا مگر ہر گیم میں پرفیکٹ ۔ںئی سے ںئی گیم جو مارکیٹ میں آتی ہے اس کے ہر اسٹیج کو پرفیکٹلی ان لاک کرسکتا ہے چند منٹوں میں۔ واہ کیا کہنے۔ لمبے لمبے ہندسوں کو باآسانی جمع تفریق کرسکتا ہے۔۔کیابغیر زائد حساب کی پریکٹس اور باقاعدہ کوچنگ لینے کے ایسا سیکھنامکمن ہے جی؟

    آئی کیو اور کیمرہ میموری کم از کم وہ جو عمیرہ نے دکھایا ہے ویسے تو ہرگز نہی ہیں۔عمیرہ جی،آئی کیواور یاداشت کا تعلق جسم کی طاقت سے نہی ہے۔ ہائی آئی کیو اور کیمرہ یاداشت والے بھی جسمانی تکلیف یا نشہ کے زیر اثر آتے ہیں۔ بے حسی ذہانت نہی ہے بیماری ہے۔آئی کیو یا اچھی یاداشت کا مطلب پہلے سے سب کچھ آنا نہی ہے۔ ایسوں کو تو استاد کے وقت اور رہنمائی کی زیادہ ضرورت ہوتی ہے اور نا ہی یہ چیزیں کسی کی ذہانت کو پرکھتی ہیں۔آئی کیو ہمیں صرف یہ بتاتا ہے کہ دیئے گئے سوالات میں سے آپ کنتے سوالات کو سمجھنے کی قابلیت رکھتے ہو یاآپکا زہنی رجحان کس فیلڈ کی طرف ہے۔کوئی بھی مسلمل محنت اور کوچنگ سے اپنا آئی کیو لیول بڑھا سکتا ہے اور اسی طرح یاداشت بھی اچھی ہوسکتی ہے ۔آئی کیو لیول یا کیمرہ میموری کسی کو اسکول یا کھیلوں میں ماہرت کا سرٹیفکیٹ نہی دیتے۔عمر کے ساتھ ہرایک کاآئی کیواور یاداشت بدلتی رہتی ہے ۔
    مشہور ریاضی دان مارکس دی سٹوائے نے بی بی سی کے ایک پروگرام۔۔''نیچر آف جینیئس'' ۔۔میں ذہانت کے حوالے سے کہا کہ ذہین وہی جو بات کو پوری تفصیل اور توجہ کے بعد سمجھتے ہیں کیونکہ اسی طرح بات اپنی پوری تفصیل کے ساتھ ذہنوں میں ہمیشہ رہتی ہے۔
    دیکھا جائے تو سالار صاحب ذہانت کے اس اعلی میعار پر نہی آتے جس پر عمیرہ نے دکھایا ہے ۔۔۔
    قران حفظ کرنا اتنا ہی آسان ہے نا کہ آپ کسی استاد کی مدد کے بغیر خود ہی حفظ کر لیں۔ عمیرہ جی سالار کو یو این او میں جاب سر چوہدری ظفر اللہ رضی اللہ سے جیلس ہو کر تو نہی دے دی کہیں۔اس لیول کی جاب ملنا اتنا بھی آسان نہی عمیرہ جی
    پاکستانی احمدی اتنے ہی طاقتور ہیں نا کہ سالار کو پاکستان سے امریکہ موو ہونا پڑا۔

    امامہ جی کو اپنے ہی شوہر سے دو دفعہ نکاح پڑھنا پڑا۔اپنے ہی شوہر کے سامنے بندوق نکال لی۔اپنے ہی شوہر کے سامنے غیر مرد سے انسینت کا اظہار۔خود کو صالح سمجھنا اور شوہر کو بدترین مخلوق۔گھر سے بھاگنے کے لیے چھپ کر نکاح کرلینا۔باقاعدہ پردہ کرتے کرتے ہلکے پردے کی طرف آنا پڑا۔ نعت سے محبت ہوئی تو اچھی آواز کی محبت میں ۔۔سبحان اللہ۔واہ واہ کیا عزت ہے۔ذلت اور کسے کہتے ہیں۔۔ کیا اسلحہ پاکستان میں اتنا ہی آسان ہے ملنا کہ میڈیکل کی طالبہ کے بھی پاس پایا جاتا ہے ۔

    ReplyDelete
  9. I do not believe that there is any depth or humanity in any of the characters. I wouldn't even waste my time of discussing plot points. It's childish with no element of reality in it.

    But JazakAllah for your detailed analysis.

    ReplyDelete
    Replies
    1. جزاک اللہ بھائی۔۔ناول اتنا فضول ہے کہ واقعی کہنے کی ضرورت نہی ۔۔ لیکن جب سے میں نے اس ناول کے مطلق '' ''دین کی کامل ترین تشریح '' اور ''اللہ کی طرف سے کہے گئے الفاظ'' ٹائپ کمنٹس پڑھے تو دماغ گھول گیا ہے۔۔ اس لیئے اپ کے بلاگ کے توسط سے اپنے سوال عمیرہ جی اور ان کے قاریوں کے سامنے پیش کر دیئے۔۔۔ ان کے پیج پر مجھے بلاک کردیا گیا ہے بجائے جواب دینے کے۔

      Delete
  10. جماعت کسی غیر احمدی لڑکی کی شادی احمدی سے کبھی نہی کرواتی تو امامہ کے اقرار کے بعد اسجد سے شادی کیسے ہوتی ؟؟کس مربی نے نکاح پڑھنا ہے ؟ اس شادی میں شامل ہونے والے تمام شرکا کو جماعت سے خارج ہونا پڑے گا یہ خلیفہ وقت کا حکم ہے۔۔ بے شک ریسرچ کرلیں جی ۔ کیا جماعت غیر احمدی ہونے پر قتل کرواتی ہے کہ امامہ صاحبہ کو گھر سے بھاگنا پڑا۔کیا فلمی تھرل ڈالا ہے عمیرہ جی ۔۔
    جماعت نے کبھی بھی الگ ہونے والوں کو واجب القتل قرار نہی دیا ہے یہ کارنامہ آپ کے ملا کو مبارک ہو جو ہر مخالف کو واجب القتل کا حقدار قرا دیتا ہے ۔


    اور ہاں عمیرہ جی سعد جیسوں بچوں کے متعلق جھوٹ گھڑنے سے پہلے آپ پہلے ''وقف نو'' کی تحریک کو بغور چیک کر لیتیں تو پتا چلتا کہ لے پالک بچوں کی بجائے احمدی اپنے بچوں کی پیدائش سے پہلے ان کو دین کے لیے وقف کرتے ہیں اس مقصد کے لیے ہم غیر احمدی یتیم بچے ہرگز نہی لیتے۔ لعنت اللہ الکاذبین

    سبط علی کی انٹروڈکشن سراسر خلیفہ رابع رحمہ اللہ کی ''مجلس عرفان'' سے اخذ شدہ ہے ۔۔ پڑھنے والے خود موازنہ کرلیں ۔۔

    کونسا ایسا اعتراض ہے جس کا جواب انٹر نیٹ پر جماعت کی طرف سے موجود نہی ہے۔جماعت احمدیہ کی طرف سے راہ ھدی نامی پروگرام ہر ہفتہ آتا ایم ٹی اے پر۔۔ لٹریچر کی بھاری تعداد الالسلام ڈاٹ آرگ پر موجود ہے۔۔ کیا ایک مسلمان اور عمیرہ کے سچے قاری کا فرض نہی کہ ۔۔ نہی ہے سنی سنائی بات خود دیکھنے کی طرح پر عمل کرے اور ہر اس اعتراض کے جواب کو خود سنے اور ریسرچ کرے جو عمیرہ نے سچ کا ڈھپہ لگا کر پیش کیے ہیں۔۔ دین کا معاملہ ہے اس معاملے میں آنکھ بند کرنے کو اللہ پسند نہی فرماتا

    حضرت عیسی علیہ السلام کی وفات نا ماننا کسی کا بھی ذاتی فیصلہ ہے لیکن اس کی کوئی قرآن،احادیث، سائنسی یا ذاتی تجربے کی روشنی میں دلیل بھی ہونی چاہیئے نا کہ آخر کن بناء پر آپ ان کو زندہ مانتے ہیں۔پہلے اس بات کی وضاحت دے دو کہ حضرت عیسی کے آنے پر بھی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم آخری نبی ہیں ؟۔۔کیسے
    زمانی ، عقلی، سائنسی، تاریخ اور روزمرہ زندگی کے قوائد کے لحاظ سے آخری کون ہوتا ہے وہ جو بعد میں فوت ہوا یا پھر وہ جو پہلے فوت ہوا؟؟۔

    سچ جھوٹ کا فیصلہ میں یا آپ نے نہیں قرآن نے کرنا ہے بغیر دلیل کے بات پر زور دینا یا عقیدہ رکھنا سچائی کی نشانی نہیں ہے اور نہ اسلام ایسے عقائد کی تعلیم دیتا ہے جن کو دلیل سے منوایا نہ جاسکے۔ بغیر دلیل کے عقائد کمزور مذہب کی نشانی ہے اور اسلام الحمدللہ کمزور نہیں ہے

    بڑی تعداد میں غیر احمدی مسلمان ہی جماعت میں شامل ہوتے ہیں اور ہوئے ہیں۔
    اگر جماعت احمدیہ کی تعلیم اسلام نہیں ہے تو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے پیار کرنے والا،قرآن، روزہ،اور نمازیں پڑھنے والا اپنی مرضی سے جماعت میں رہنا کیوں پسند کرے گا۔سوچیں کہ کوئی اپنی جان داو پر لگا کر جھوٹ، بناوٹ اور دھوکہ پر رہنے پر مجبور کیوں ہوگا۔اگر جماعت غیر اسلامی کاموں پر عمل کرواتی ہے تو نیا احمدی ہونے والا بلاوجہ نظام کے حکم کیوں مانے گااور خوامخواہ میں غیر مسلم کہلانا کون پسند کرے گا۔۔
    جان اور ایمان سے بڑھ کر تو کچھ عزیز نہیں۔


    کفر کم تر از کفر۔۔جیسی اصلاح سے واقفیت حاصل کریں پھر یہ اعتراض جماعت پر لگائیں کہ ہم دوسرے مسلمان کو کافر کہتے ہیں۔۔۔ ہرگز نہی ہم ان کو غیر احمدی کہتے ہیں۔

    جو لوگ دینی علم میں کچھ مقام نہیں رکھتے وہ جماعت سے الگ ہو کر اپنی ذاتی دشمنی کو مذہبی رنگ دیں تو یقینا اس سے جماعت جھوٹی ثابت نہیں ہوتی ہےاور نہ ہی حضرت احمد علیہ السلام کی پیش گوئیاں جھوٹی پڑتی ہیں ۔ کم نظروں اور خود پسندوں کے کہنے پر تاریخی حقائق اور واقعات نہی بدلتے ۔۔


    اللہ کے بنائے ہوئے سلسلوں کی مثال درخت جیسی ہے اور انسان پتوں جیسے ہرے بھرے پتے ہمیشہ اپنی شاخوں کے ساتھ رہتے ہیں اور خشک جھڑ جاتے ہیں۔

    میں جھوٹی تعریف نہیں کر رہی اور ہی مجھے اس کی ضرورت ہے لیکن یہ سو فی صد حقیقت ہے کہ جماعت میں شامل ہونے والوں کی اکثریت کے اپنے گھر والے اور دوست رشتے دار یہ گواہی دتیے ہیں کہ ہم میں سے سب زیادہ دیندار اور شریف النفس یہی بندہ ہے۔کبھی موازنہ تو کریں کہ کیسے لوگ احمدیت چھوڑ کر ملاء کے پاس جاتے ہیں۔ان کی طرز زندگی اور قریبی عزیزوں کی گواہی کو پرکھیں تو پتا چل جائے گا کہ اپنی ذاتی رنجش, اپنے علم پر غرور اور خود کو آگے رکھنے کے شوق ان کے الگ ہونے کا فیصلہ بنا۔

    حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو تمام احمدی آخری نبی مانتے ہیں اور اس پر ہمارا سو فیصد ایمان ہے ۔ہمیں اپنے عقیدے کی اظہار کی کسی سے ڈرنے کی ضرورت نہی ہے ۔جو سچ ہے ہمارا ایمان ہے ۔ وہی لکھا ہے۔

    ReplyDelete

  11. ملا نے جماعت کے لٹریچر سے چند اقتسابات سیاق اسباق سے ہٹ کر اور اپنی مرضی سے اضافہ کرکے اہل یہود کو پیچھے چھوڑ دیا مگر افسوس ہے پڑھے لکھے اور عقل کا دعوا کرنے والے عمیرہ جیسے نام نہاد مذہب پر اتھارٹی رکھنے والوں پر جو ان کو حرف مقدس سمجھ کر بغیر تحقیق کے آگے پھیلاتے ہیں

    عمیرہ، اشتیاق احمد ، مظہر کلیم، نسیم حجازی اور ان جیسے مصنفوں سے مخلصانہ درخواست ہے کہ خدارا اسلام کی اتنی توہین مت کیجیئے۔۔
    پیسےاور شہرت کے لیے دین کو ڈراما مت بنائیں کہ بس ایکٹر ہی ایکٹر رہ جائیں اور مذہب کی سچائی کا دارومدار ٹی وی پر بے حیائی کو خوبصورتی سے پیش کرنے پر ہو جائے ۔۔۔ خدا وہ وقت نہ لائے جب پاکستانیوں کی اکثریت لا دین ہوجائے۔

    اللہ تعالی ہم سب کو اپنی حفظ و امان میں رکھے اور اپنی ہدایت کی روشنی سے منور کرے۔۔۔۔۔ آمین



    اب تک لے لیے اتنا ہی کافی ہے۔۔۔۔۔۔ہی ہی ۔۔ مزید کوءِ اعتراض آنے پر گفتگو آگے بڑھے گی انشاء اللہ

    ReplyDelete
  12. some piece of shit was this article! peer e kamil is indeed a master piece!!!!!!!

    ReplyDelete
    Replies
    1. agreed... Peer e Kamil صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم novel is a master piece which opens every detail of these filthy ahmedis

      Delete
  13. you guys are not even muslims...and yes Ahmedi's are wajib ul qatal as they are murtad....Ahmedi's are the biggest liars on the planet...They will burn in Hell.

    ReplyDelete
    Replies
    1. yeah its soooo a true novel. i met an ahmedi girl who hid her actual fake religion from me and all of my friends and other college mates. her name was aliya tabassum. whence her tutor got investigation and we then knew that she's qadiani, she left meeting us and left contacting us. but before that she was habitually talking to us whether we want to listen to her or not. after knowing her reality she left all of us like a coward.

      Delete
  14. and the review is totally piece of shit

    ReplyDelete
    Replies
    1. Thank you for reading the review.

      Delete
  15. Pretty obvious who is on the right side with the type of language and hatred used. Muslims should remember to look at their own deeds as they will be answerable to God rather than making decisions on others whether or not they are Muslims or believers or so on and then change their stance as they will. If Holy Prophet Muhammad pbuh is so important, then first his teachings should be followed, few of them which are: Let him who calls himself a Muslim accept him as a muslim, he who says the kalima is a muslim, respect other religions, respect the leaders of other religions and beliefs, Islam means peace and be merciful and kind to others, look not towards then with hatred.

    ReplyDelete
  16. Maybe read it on the digest when it was being published. It was a piece of crap, Umera Ahmad introduced talibanism in digest writing, after that there was no end..

    ReplyDelete
  17. I'm not an Ahmaddi, but I do know lots of Ahmadi families and this whole book is crap; what is even more astonishing is the fact that, as my mother told me, that apparently Qadianis sell ther religion by receiving money from West, (USAid I think, though I could be wrong). I never liked even her other dramas, so I ddn't even bother reading the book; many reviews in favour of this book was enough to tell me that this book, as all writings of Umaira Ahmed, were crap.
    The Ahmaddi jammat is actually concerned about their citizens. I've evenn seen how they inform the families of potential future married couple, the status of either spouses, like what job the guy has, either families status, what they are like etc, especially if either spouse lives abroad. Many marriages across borders have been more of a scam, andin these cases, women have suffered. If theor jammat is so organised, so concerned about individual matters, then shame on us Sunnis, so called oh! So righteous Muslims.
    All in all, the book was just, as the reviewer said, marketable ploy, not even basic, above rumours, research done.

    ReplyDelete
  18. I g0t a headache after reading these c0mments over 'PIR e KAMIL (S.A.W) ! !
    It is useless t0 convience any Ahmadiya or muslim here but I just want some answers of these questions.
    1.Where, and in particular,which place Mirza died ?
    2.IF Essah will come,how then he become Masseh ?
    3.How a "Prophet " call his dis believers "harami ki olad" ?
    4. Bible and "TOURAIT" gives clear indication of the 'nazu'l" of Pir e Kamil (S.A.W),why I dont find anything about MIrza ?
    5.If massjid e Aqsa is in Rabwah? what is that in Palestine?

    ReplyDelete
    Replies
    1. your all questions are correct. donot search them or else they'll mislead you. may ALLAH protect every muslim from qadiani people aameen.

      Delete
  19. I sincerely advise you to conduct a detailed research on everything and not believe every second hand information that comes your way. All of these questions have been answered in detail several times in literature and also on TV. I suggest you make an honest effort and lend an ear to it. Regards.

    ReplyDelete
  20. Despite your assertion of "hate speech", Umera Ahmed's Peer-e-Kamil was able to achieve what none of the polemical essays and speeches against Qadianis would ever have achieved. Around 28 editions of the book have been sold since 2004. Your opinion remains an opinion.

    ReplyDelete

Topics

ahmadiyya (44) islam (35) pakistan (29) qadiani (27) muhammad (8) Quran (7) muslim (7) taliban (7) Imam Mahdi (5) Mirza Ghulam Ahmad (5) jesus (5) Messiah (4) in the shadow of the sword (4) india (4) jihad (4) EDL (3) ahrar (3) atheism (3) Mecca (2) Moses (2) bbc (2) bnp (2) lahore (2) maulvi (2) ahmadi (1) apostacy (1) bible (1)